RSS Feed

9 September, 2014 16:11

Posted on

NADEEM MALIK LIVE

samaa.tv/nadeemmaliklive/

09-SEP-2014

میں جب وزیراعظم تھا تو مجھے الیکشن میں کسی قسم کی دھاندلی کی کوئی معلومات نہیں تھیں۔میر ہزار خان کھوسو کی ندیم ملک لائیو میں گفتگو

فخرالدین جی ابراہیم بہت ایماندار آدمی ہیں۔میر ہزار خان کھوسو

ہم نے کراچی سے الیکشن میں دھاندلی کے بہت سے وڈیو ثبوت پیش کئیے تھے۔ عارف علوی

الیکشن میں دھاندلی کی شکایات پنجاب کے علاوہ دوسرے صوبوں سے بھی ملتی رہیں۔ عارف علوی

میں وزیراعظم تھا لیکن الیکشن میں دھاندلی کو دیکھنا الیکشن کمشن کا کام تھا۔ میر ہزار خان کھوسو

جب میں وزیراعظم بنا تو بلوچستان اور کے پی کے حالات بہت خراب تھے میں نے سرداروں سے ملاقاتیں کر کے انہیں الیکشن پر راضی کیا۔ میر ہزار خان کھوسو

مسلم لیگ ن کہتی ہے کہ اگر نواز شریف اور چوہدری افتخار میں گٹھ جوڑ تھا تو پی ٹی آئی اسے ثابت کرے۔عارف علوی

ہم کہتے ہیں کہ الیکشن میں دھاندلی کی تحقیقات ہونی چاہییں تا کہ پتہ چلے کہ کس حد تک دھاندلی ہوئی تھی۔ عارف علوی

ہمارے علاقعے میں بالکل ٹھیک الیکشن ہوئے کوئی دھاندلی نہیں ہوئی تھی۔ سردار علی محمد مہر

جو ہار جائے وہ کہتا ہے کہ الیکشن میں دھاندلی ہوئی اب سب کو پاکستان کو سوچنا چاہئیے۔ سردار علی محمد مہر

الیکشن کمشن کے پراسس میں بہتری کی پورے ملک میں بہت گنجائش ہے۔ میر ہزار خان کھوسو

ہم نے مسلم لیگ ن کو کہا ہے کہ تیس حلقے ہماری مرضی کے ہوں اور تیس آپ اپنی مرضی کے چن لیں۔ عارف علوی

اس وقت ہمارا مسلم لیگ ن سے ٹرمز آف ریفرنس پر اختلاف ہے۔ عارف علوی

نگران حکومت ایک فیل تجربہ ہے اسے بالکل پتہ نہیں ہوتا کہ نچلی سطح پر کیا ہو رہا ہے۔ میر ہزار خان کھوسو

آئندہ الیکشن میں دھاندلی کے امکانات ختم کرنے کے لئیے جدید زرائع استعمال کئیے جانا چاہییں۔ عارف علوی

جن لوگوں نے پچھلے الیکشن میں دھاندلی کروائی ان کو سزا ملنی چاہئیے۔ طارق عظیم

الیکشن کے دوران عبوری حکومت بنانے کی بجائے صدر کو الیکشن کروانے کا اختیار دے دینا چاہئیے۔ میر ہزار خان کھوسو

حکومت نے اب تک بہت زیادہ نرمی دکھائی ہے۔ طارق عظیم

About NadeemMalikLive

NADEEM MALIK LIVE IS A FLAGSHIP CURRENT AFFAIRS PROGRAMME OF SAMAA.TV

Comments are closed.

%d bloggers like this: