RSS Feed

23 September, 2014 07:05

Posted on

NADEM MALIK LIVE

samaa.tv/nadeemmaliklive/

22-SEP-2014

جنرل رضوان اختر کی ڈی جی آئی ایس آئی کے طور پر تعیناتی ایک مثبت قدم ہے۔ بریگیڈئیر سعد محمد کی ندیم ملک لائیو میں گفتگو

اچھ بات ہے کہ جنرل ظہیر الاسلام کی مدت ملازمت میں توسیع نہیں کی گئی پاکستان کی فوج میں قابل افسروں کی کمی نہیں ہے۔ سعد محمد

میں نے جنرل رضوان اختر کو کام کرتے دیکھا ہے خاموش رہتے ہیں زیادہ بات نہیں کرتے اور یہ ایک فوجی کے لئیے مثبت بات ہے۔ سعد محمد

ڈی جی رینجرز کے طور پر کراچی آپریشن کے دوران اگر کوئی بات ٹھیک نہیں ہوتی تھی تو کھل کر اس کا اظہار کرتے تھے۔ سعد محمد

کراچی میں کام کرتے ہوئے ان کا ایک ہاتھ کھلا تھا لیکن دوسرا نہیں تھا پھر بھی جرائم میں کافی حد تک کمی آئی ہے۔ سعد محمد

میں نے خود استعفی نہیں دیا بلکہ مجھ سے استعفی لیا گیا ہے۔ پروین عزیز جونیجو

مجھے زرداری ہاؤس سے فون آیا کہ مجھے فریال تالپور نے بلایا ہے۔ پروین عزیز جونیجو

میں اپنے ساتھ قرآن پاک لے کر گئی مجھے کہا گیا کہ ایک صاف پیپر پر سائن کر دو اور مجھ پر ہوٹنگ کی گئی۔ پروین عزیز جونیجو

جو لوگ زرداری ہاؤس میں موجود تھے ان میں میرا میاں بھی شامل تھا اور مجھے کہا گیا آپ بہت خوبصورت ہیں جا کر دوسرا میاں ڈھونڈھ لیں۔ پرون عزیز جونیجو

مجھے کہا گیا کہ جب تک دوسرا میاں نہیں ملتا مجھے اپنے خاوند کا گھر بھی خالی کرنا ہے ہماری بیٹیاں وہ خود ہی پال لے گا۔ پروین عزیز جونیجو

میں نے استعفی نہیں دیا میں ابھی بھی ایم پی اے ہوں میں اسبلی کے اجلاس میں شامل ہوں گی۔ پروین عزیز جونیجو

میں بلاول بھٹو سے انصاف مانگتی ہوں وہ پارٹی کا مالک ہے۔ پروین عزیز جونیجو

جنرل رضوان اختر کو ڈی جی آئی ایس آئی سب لوگوں سے مشورے کے بعد افہام و تفہیم سے لگایا گیا ہے۔ طارق عظیم

جنرل رضوان اختر سے میری کراچی میں کچھ ملاقاتیں ہوئیں بہت ہی سٹریٹ فارورڈ آدمی ہیں۔ عارف علوی

میں بہت خوش ہوں کہ جنرل رضوان اختر کو ڈی جی آئی ایس آئی لگایا گیا ہے۔ عارف علوی

وہ جو انگلی اٹھنے والی بات کی جاتی ہے وہ اگر فوج کی ہوتی تو اٹھارہ بیس دن پہلے اٹھ جاتی۔ سعد محمد

فوج کو اب اقتدار میں نہ تو دنیا قبول کرے گی اور جو کچھ مشرف کے ساتھ ہوا اس کے بعد کوئی اس کے بارے میں نہیں سوچے گابھی نہیں۔ سعد محمد

فوج کے اقتدار میں آنے سے پاکستان اور فوج دونوں کی بیعزتی ہوئی فوج کا کام نہیں ہے کہ حکومت کرے۔ سعد محمد

پی ٹی آئی نے بارہا یہ کہا ہے کہ ہم فوج کے اقتدار میں آنے کے خلاف ہیں اور اگر ایسا کیا گیا تو ہم اس کے خلاف کھڑے ہوں گے۔ عارف علوی

پی ٹی آئی کی کور کمیٹی نے باقاعدہ فیصلہ کیا تھا کہ ہم پی اے ٹی سے کوئی اتحاد نہیں کریں گے۔ عارف علوی

ہم نے اور مسلم لیگ ن دونوں نے فوج کو مزاکرات میں گارنٹر کے طور پر لانے کا کبھی نہیں کہا۔ عارف علوی

چوہدری نثار نے فوج کے میڈی ایٹر اور فسیلیٹیٹر کے کردار کی بات کی تھی۔ عارف علوی

عمران خان نے کہا کہ اگر فوج کو بات چیت میں سہولت کار کے طور پر لیا جائے گا تو وہ آرمی چیف سے کم کسی سے بات نہیں کریں گے۔ عارف علوی

مزاکرات میں ووٹوں کی تحقیقات کے مسئلے کی وجہ سے ڈیڈ لاک پیدا ہوا۔ عارف علوی

حکومت اور پی ٹیٰ آئی دونوں فریقوں کو لچک کا مظاہرہ کرنا پڑے گا۔ سعد محمد

مزاکرات میں اپنے مقصد کو ہمیشہ مبہم رکھتے ہیں تو ہمیشہ ونر رہتے ہیں اپنا مقصد پہلے سے نہیں بتاتے۔ سعد محمد

ہم نے کافی لچک دکھائی ہے اب دسرا فریق بھی کچھ لچک دکھائے۔ طارق عظیم

مسلم لیگ ن والے میٹنگ میں کہتے ہیں کہ پکڑ دھکڑ نہیں کریں گے لیکن بعد میں کرتے وہی ہیں۔ عارف علوی

حکومت کہتی ہے صرف منصوبہ بندی کے تحت ہونے والی دھاندلی کی تحقیقات ہونی چاہئیے ہم کہتے ہیں پہلے یہ دیکھ لیں کہ دھانلی ہوئی کہ نہیں۔ عارف علوی

ہم اب بھی بات چیت کے لئیے تیار ہیں لیکن حکومت کی طرف سے کوئی پیشرفت نہیں ہو رہی۔ عارف علوی

پی ٹی آئی والے جب کہیں حکومت بھی بات چیت کے لئیے تیار ہے۔ طارق عظیم

پچھلے الیکشن میں جو کچھ ہوا آئیندہ کے لئیے اس سے سبق لینا چاہئیے کہ دوبارہ ایسا نہ ہو۔ سعد محمد

About NadeemMalikLive

NADEEM MALIK LIVE IS A FLAGSHIP CURRENT AFFAIRS PROGRAMME OF SAMAA.TV

Comments are closed.

%d bloggers like this: