RSS Feed

25 February, 2016 06:52

Posted on

NADEEM MALIK LIVE

http://videos.samaa.tv/NadeemMalik/

24-FEBRUARY-2016

آپریشن ضرب عضب اور دہشت گردی کے خلاف ہم فوج کے شانہ بشانہ کھڑے ہیں۔ ندیم افضل چن کی ندیم ملک لائیو میں گفتگو

جنرل راحیل شریف کا ملازمت میں توسیع لینے کا معاملہ کبھی پارٹی میٹنگ میں زیر بحث نہیں آیا۔ ندیم چن

خرم وٹو نے پنجاب اسمبلی میں جو راحیل شریف کے ملازمت میں توسیع لینے کی بات کی ہے مجھے اس کا نہیں پتہ ہے۔ ندیم چن

پیپلز پارٹی میں ایک مینوفیکچرنگ فالٹ ہے بھٹو کے زمانے سے کچھ لوگوں نے اس معاف نہیں کیا اور کچھ اس کے لئیے جانیں دے رہے ہیں کوڑے کھا رہے ہیں۔ ندیم چن

ہم راحیل شریف کے توسیع نہ لینے کے بیان کو ویل کم کرتے ہیں ہم سمجھتے ہیں کہ اداروں کو مظبوط ہونا چاہئیے۔ شیریں مزاری

اگر راحیل شریف کے توسیع لینے کے متعلق زرداری کا بیان غلط تھا یا بغیر اجازت کے دیا گیا تو پھر اس کی تردید آنی چاہئیے تھی۔ شیریں مزاری

پیپلز پارٹی تمام ادارں کے ساتھ اپنے تعلقات کو درست رکھنا چاہتی ہے۔ خرم وٹو

میں نے پنجاب اسمبلی میں جنرل راحیل کی ملازمت میں توسیع کی جو قرارداد پیش کی ہے یہ تمام قوم کی آواز ہے۔ خرم وٹو

ضرب عضب کو جنرل راحیل نے جس طرح کمانڈ کیا ہے یہ انہی کا خاصہ ہے ورنہ پہلے جنرل کیانی نے یہ کام نہیں کیا تھا۔ خرم وٹو

جو کام پچھلے ساٹھ سالوں میں کوئی سیاسی حکومت نہیں کر سکی وہ جنرل راحیل کر رہے ہیں انہیں توسیع ملنی چاہئیے۔ خرم وٹو

جنرل راحیل سے پہلے جنرل پرویز مشرف اور جنرل کیانی بھی توسیع لے چکے ہیں۔ خرم وٹو

پاکستان میں کوئی بھی جرنیل جب آتا ہے تو اس کی تعریف کے پل باندھ دئیے جاتے ہیں۔ روحیل اصغر

جنرل راحیل کی توسیع کے معاملے کو کھلے عام ڈسکس نہیں کرنا چاہئیے یہ سٹیٹ اور فوج کے درمیان ایک معاملہ ہے۔ روحیل اصغر

میرے خیال میں جب وقت آئے گا تو جنرل راحیل شریف سے توسیع لینے کے بارے میں ضرور پوچھا جائے گا۔روحیل اصغر

جنرل راحیل کا توسیع نہ لینے کا بیان یہ ظاہر کرتا ہے کہ انہیں اپنے رفقا کار پر اعتماد ہے کہ وہ اسی طرح کام کریں گے جیسے وہ کر رہے ہیں۔ روحیل اصغر

غلطیاں سب سے ہوئی ہیں اس میں جرنیل بھی شامل ہیں اور سول حکومتیں بھی شامل ہیں۔ آصف حسنین

اگر کوئی اچھا کام کر رہا ہے تو اس کو توسیع ملنی چاہئیے اس میں کوئی حرج نہیں ہے۔آصف حسنین

جنرل راحیل شریف کو توسیع دینے کا فیصلہ مسلم لیگ ن کی حکومت نے کرنا ہے اگرچہ ان کے کچھ تحفظات ہیں۔ آصف حسنین

جنرل راحیل شریف کا جنرل ایوب اور یحیی سے مقابلہ نہیں کرنا چاہئیے جنرل راحیل نے اچھا کام کیا ہے اس میں کوئی دو رائے نہیں ہیں۔ آصف حسنین

میں بھی اس بات کی تائید کرتا ہوں کہ ملازمت میں توسیع کا فیصلہ خود جنرل راحیل شریف نے کرنا ہے کوئی اور نہیں کر سکتا۔ ندیم افضل چن

دہشت گردی اور انتہا پسندی کے خلاف پیپلز پارٹی نے ہمیشہ لیڈ لی ہے۔ ندیم افضل چن

ہم نے ہمیشہ فوج کی حمایت کی ہے یہ پاکستان کا واحد منظم ادارہ ہے ہم مدعی ہی رہنا چاہتے ہیں ملزم نہیں بننا چاہتے۔ ندیم چن

اس بات کا دور دور تک بھی کوئی امکان نہیں ہے کہ ایم کیو ایم بلدیہ ٹاؤن جیسے واقعات میں ملوث ہو۔ آصف حسنین

صولت مرزا نے ایم کیو ایم پر جو الزامات لگائے تھے وہ اس سے کلئیر ہو چکی ہے۔ آصف حسنین

پہلی جے آئی ٹی کی رپورٹ کے مطابق بلدیہ ٹاؤن فیکٹری کو آگ شارٹ سرکٹ کی وجہ سے لگی۔ آصف حسنین

اس بات کی تصدیق ہو چکی ہے کہ بلدیہ ٹاؤن فیکٹری کو آّگ لگائی گئی تھی۔ شیریں مزاری

بلدیہ ٹاؤن پر جے آئی ٹی کی رپورٹ کوئی سیاسی فیصلہ نہیں ہے ایجنسیوں نے اپنی رپورٹ دی ہے۔ شیریں مزاری

پاکستان کے تمام اداروں کے لوگ بلدیہ ٹاؤن جے آئی ٹی میں شامل ہیں۔ روحیل اصغر

بلدیہ ٹاؤن کی جے آئی ٹی رپورٹ پر کاروائی ہونی چاہئیے ہو سکے تو اس کا فیصلہ ملٹری کورٹ میں ہونا چاہئیے۔ ندیم افضل چن

اگر آئیندہ کے لئیے بلدیہ ٹاؤن جیسے واقعات کو روکنا ہے تو پھر ایک آدھ کیس کو ٹیسٹ کیس بنانا ہو گا۔ روحیل اصغر

ایم کیو ایم پر ماضی میں لگائے گئے کوئی بھی الزامات ثابت نہیں ہو سکے۔ آصف حسنین

ہم مقدمات کو ان کے منطقی انجام تک نہیں پہنچاتے پنجاب میں مزہبی تنظیموں کے سہولت کار موجود ہیں۔ ندیم افضل چن

فیصل آباد میں مزہبی تنظیمیں کھلے عام لوگوں کے جھگڑوں کے فیصلے کر رہی ہیں۔ ندیم چن

میں سمجھتا ہوں کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں اب سیاست شامل ہو چکی ہے۔ ندیم چن

ہمیشہ پنجاب میں دہشت گردوں کے سہولت کاروں کی بات کی جاتی ہے فوج کی ایجنسیوں کی موجودگی میں یہ بات ممکن نہیں ہے۔ روحیل اصغر

پنجاب میں ہلچل اس وقت مچی جب ایجنسیوں نے وزیراعظم کو پنجاب میں موجود سہولت کاروں کے بارے میں معلومات فراہم کیں۔ ندیم چن

نواز شریف اس وقت ملک کے سب سے زیادہ تجربہ کار شخص ہیں لیکن ان کے تجربے کا ملک کو کوئی فائدہ نہیں ہوا۔ ندیم چن

نواز شریف نے اپنے دوستوں کو نوازا ہے اور ملک میں کوئی سرمایہ کاری نہیں آئی بلکہ لون آیا ہے۔ ندیم چن

پنجاب میں آپریشن اوور ڈیو ہے ساؤتھ پنجاب میں فرقہ پسند تنظیمیں موجود ہیں۔ شیریں مزاری

یہ نہیں ہو سکتا کہ ایک صوبے میں تو آپریشن ہو لیکن دوسرے میں نہ ہو۔ شیریں مزاری

پنجاب میں کالعدم تنظیموں کے دفاتر موجود ہیں لیکن کوئی کاروائی نہیں کی گئی نیب نے بھی کوئی ایکشن نہیں لیا۔ آصف حسنین

About NadeemMalikLive

NADEEM MALIK LIVE IS A FLAGSHIP CURRENT AFFAIRS PROGRAMME OF SAMAA.TV

Comments are closed.

%d bloggers like this: