RSS Feed

21 July, 2016 04:33

Posted on

NADEEM MALIK LIVE

http://videos.samaa.tv/NadeemMalik/

20-JULY-2016

ہم سات اگست کو عوام سے رجوع کریں گے اپنا نقطہ نظر عوام کی کچہری میں لے کر جایں گے کیونکہ حکومت اپنی ضد پر قائم ہے۔ شاہ محمود قریشی کی ندیم ملک لائیو میں گفتگو

مشترکہ اپوزیشن نے ٹی او آرز پر آٹھ نشستیں کیں اس میں لچک بھی دکھائی لیکن حکومت نے اس کو کوئی اہمیت نہیں دی۔ شاہ محمود قریشی

کل ہمارا ایک مشاورتی اجلاس ہوا جس میں فیصلہ ہوا کہ حکومت لچک نہیں دکھائے گی اور ہمارے پاس عوام کے پاس جانے کے علاوہ کوئی راستہ نہیں رہے گا۔ شاہ محمود قریشی

ہم نے پوری کوشش کی کہ جمہوری حکومت ہے وہ اپنی صفائی پیش کرے اور ہم نے کافی مواقع فراہم کئے۔ شیری رحمان

وزیراعظم نے پارلیمنٹ میں اور ملک سے باہر پاناما لیکس پر بات کی لیکن کہیں بھی عوام کو مطمئین نہیں کیا۔شیری رحمان

پیپلز پارٹی نے ابھی یہ فیصلہ نہیں کیا کہ وہ احتجاج میں پی ٹی آئی کا ساتھ دے گی۔ شیری رحمان

احتجاج کرنا جمہوری حق ہوتا ہے خاص طور پر جب کہ آپ دیوار کے ساتھ لگا دئیے گئے ہوں۔ شیری رحمان

ہم یہ فیصلہ کریں گے کہ ہم احتجاج کو کس حد تک لے کر جایں گے۔ شیری رحمان

حکومت کے پاس ایک موقع اور ہے ہم ٹی او آرز پر ایک بل پارلیمنٹ میں لے کر جا رہے ہیں حکومت اس پر قانون سازی کر دے۔ شاہ محمود قریشی

ہر چیز کی ایک ریڈ لائن ہوتی ہے سنہری موقع ہے حکوت فائدہ اٹھائے۔ شیری رحمان

اپوزیشن ضرور احتجاج کرے بس اس میں مٹھائی اور انتشار نہ بانٹے۔ خرم دستگیر

نہ ہم انتشار چاہتے ہیں اور نہ ہی ہم کوئی فوج مداخلت چاہتے ہیں اپوزیشن نے فیصلہ کیا ہے کہ کسی بھی ماورائے آئین اقدام کی حمایت نہیں کرے گی۔ شاہ محمود قریشی

ہم ٹی او آرز پر قانون سازی کو خوش آمدید کہتے ہیں اور جو بھی بل آئے گا اس پر ضرور بات ہو گی۔ خرم دستگیر

اپوزیشن احتجاج کرنے کی بجائے جلد از جلد الیکشن کمشن کو مکمل کرے۔ خرم دستگیر

پاناما پیپرز کوئی مجرمانہ ثبوت نہیں ہے اس میں صرف یہ کہا گیا ہے کہ ان لوگوں کی کمپنیاں ہیں۔ خرم دستگیر

حکومت کی اپنی جماعت فعال نہیں ہے ان کے اپنے ایم این ایز قابو میں نہیں آ رہے ادروں کو کھوکھلا کر دیا ہے۔ شیری رحمان

کل کے اجلاس میں بیشتر سیاسی جماعتیں کہہ رہی تھیں کہ حکومت سے اب بات نہ کی جائے کیونکہ ان کی نیت پر اب شک کیا جا رہا ہے۔ شاہ محموفد قریشی

حکومت سوچ سمجھ کر پاناما لیکس کے معاملے کو طول دینا چاہتی ہے تاکہ لوگ اس کو بھول جایں اور اپوزیشن میں بھی انتشار پیدا ہو۔ شاہ محمود قریشی

آرمی چیف کی تقرری کا پاناما لیکس کے ساتھ کوئی تعلق نہیں ہے۔ شاہ محمود قریشی

حکومت اگر چاہتی تو اب تک پاناما لیکس کا فیصلہ ہو چکا ہوتا۔ شاہ محمو قریشی

وزرا کہتے ہوئے تھکتے نہیں ہیں کہ حکومت اور فوج ایک پیج پر ہیں لیکن ایسا نہیں ہے۔ شاہ محمود قریشی

اس وقت ہماری کوئی خارجہ پالیسی نہیں ہے حکومت آہستہ آہستہ فوج کو جگہ دے رہی ہے۔شیری رحمان

یہ بات کہنا درست نہیں ہے کہ حکومت کی کوئی خارجہ پالیسی نہیں ہے۔ خرم دستگیر

حکومت بننے کے ایک سال کے اندر وزیراعظم ایران گئےا ور بھارت سے معاملات درست کئیے۔ خرم دستگیر

حکومت نے کشکول پکڑ کر اتنا قرضہ لے لیا ہے کہ پتہ نہیں کہ اگلی حکومت کیا کرے گی۔ شیری رحمان

اب حکومت اگر وزیر خارجہ مقرر بھی کر دے گی تو کوئی فائدہ نہیں ہو گا۔ شیری رحمان

حکومت اپوزیشن کو اتنا دیوار کے ساتھ نہ لگائے کہ اسے سڑکوں پر آنا پڑے۔ شیری رحمان

ہم قوم کو حقیقت بتانا چاہتے ہیں اور یہ کہ اگر کرپشن کو کنٹرول نہ کیا گیا تو حالات ٹھیک نہیں ہوں گے۔ شاہ محمود قریشی

یہ حکومت کی مہربانی ہے کہ جس نے اپوزیشن کو اکٹھا کر دیا ہے ورنہ دو ہزار تیرہ میں اس کے تین بڑے دھڑے تھے۔ شاہ محمود قریشی

پیپلز پارٹی کبھی بھی کوئی غیر آئینی کام نہیں کرے گی ہمارے لیڈر زوالفقار علی بھٹو اور بینطیر بھٹو کا خون جمہوریت میں شامل ہے۔ شیری رحمان

اظہار رائے کی آزادی کو غیر جمہوری کاموں کے لئیے استعمال نہ کیا جائے۔ خرم دستگیر

حکومت پاناما لیکس پر پارلیمنٹ میں بل پر اتفاق رائے کر لے احتجاج کا کوئی جواز ہی نہیں ہرے گا۔ شاہ محمود قریشی

About NadeemMalikLive

NADEEM MALIK LIVE IS A FLAGSHIP CURRENT AFFAIRS PROGRAMME OF SAMAA.TV

Comments are closed.

%d bloggers like this: