RSS Feed

22 November, 2016 17:22

Posted on

NADEEM MALIK LIVE

http://videos.samaa.tv/NadeemMalik/

22-NOVEMBER-2016

جنرل راحیل شریف کو عوام اور حکومت سب یاد رکھیں گے۔ محمد زبیر کی ندیم ملک لائیو میں گفتگو

جنرل راحیل شریف کے سامنے بہت بڑے چیلنجز تھے جنرل راحیل نے ان کو بہت اچھی طرح سے ہینڈل کیا۔ محمد زبیر

جنرل راحیل نے نہ صرف کراچی بلکہ ملک کے ہر علاقعے میں جہاں دہشت گردی تھی ختم کی حالانکہ حکومت نے ان کے راستے میں روڑے بھی اٹکائے۔ انیس ایڈووکیٹ

راحیل شریف نے جمہوریت کو ختم کرنے والے بہت سے موقعوں سے فائدہ نہیں اٹھایا لیکن ہو سکتا ہے کہ آنے والا آرمی چیف ایسا نہیں کرے۔ انیس ایڈووکیٹ

یہ بات اب واضع ہو جانی چاہئیے کہ فوج کی طرف سے جمہوریت کو کوئی خطرہ نہیں ہے۔ امجد شعیب

یہ تاثر غلط ہے کہ فوج ملک کی خارجہ پالیسی چلا رہی ہے۔ امجد شعیب

پاکستان کی پارلیمنٹ نے یہ فیصلہ کیا کہ ہماری ملٹری یمن نہیں جائے گی۔ امجد شعیب

ہمارے ایران کے ساتھ بہت بہتر تعلقات ہو سکتے تھے لیکن میاں نواز شریف کے سعودی عرب کے ساتھ زاتی تعلقات کی وجہ سے ایسا نہیں ہو سکا۔ امجد شعیب

پاکستان کی خارجہ پالیسی میں فوج کے رول کی ایک تاریخ ہے اس کی وجہ بھارت اور افغانستان کے حالات ہیں۔ محمد زبیر

جمہوریت جیسے جیسے مظبوط ہو رہی ہے فوج کی حکومتی معاملات میں مداخلت کم ہو رہی ہے۔ محمد زبیر

ہر حکومت کوشش کرتی ہے کہ بھارت کے ساتھ اچے تعلقات ہوں ہماری حکومت نے بھی کی لیکن مودی نے اس کا مثبت جواب نہیں دیا۔ محمد زبیر

وزیراعظم اور آرمی چیف سعودی عرب اور ایران کے دورے پر ساتھ گئے دونوں کے تعلقات اتنے بھی خراب نہیں تھے جتنا بتایا جا رہا ہے۔ محمد زبیر

کراچی ائیر پورٹ پر حملے کے کچھ مرنے والوں کو ہم نے نا معلوم افراد کے طور پر دفنا دیا تھا۔ ثنا اللہ عباسی

امجد صابری کے قتل کے الزام میں گرفتار ہونے والے ملزم کیپری نے بتایا ہے کہ کراچی ائیر پورٹ حملے میں بھی ان کے ساتھی ملوث تھے۔ ثنااللہ عباسی

کراچی ائیر پورٹ حملے میں کراچی کے کچھ لوکل لوگ بھی ملوث تھے۔ ثنا اللہ عباسی

ہم اب مختلف واقعات کی تحقیقات ایک مشین کی مدد سے کر رہے ہیں جس میں کوئی شک نہیں ہے۔ ثنا اللہ عباسی

ہم اب واقعات کی تحقیقات میں اقبالی بیان یا انسانی طریقہ تفتیش پر انحصار نہیں کر رہے ہیں۔ ثنا اللہ عباسی

ہم جو لوگ افغانستان، عراق یا شام گئے ہیں ان کا بھی ایک ڈیٹا فوج کے ساتھ مل کربنا رہے ہیں۔ ثنا اللہ عباسی

پٹھان کوٹ کے حملے کے بعد وزیراعظم نے سری لنکا سے مودی کو فون کیا اور اس حملے کی تحقیقات کروانے کی یقین دھانی کروائی۔ امجد شعیب

اس کے مطلب یہ تھا کہ ہم نے بھارت کے الزام لگانے سے پہلے ہی پٹھان کوٹ حملے کا جرم تسلیم کر لیا اور ایف آئی آر بھی درج کی۔ امجد شعیب

پٹھان کوٹ حملے کے دو دن بعد بھارت کی اپنی ایجنسی نے ان کی حکومت کو بتایا کہ پاکستان کی طرف سے کوئی حملہ آور نہیں آیا۔ امجد شعیب

بھارت کی ایک ایجنسی نے وہاں ٹی وی کو بتایا کہ پاکستان یا اس کا کوئی ادارہ پٹھان کوٹ حملے میں ملوث نہیں ہے تو بھارتی حکومت نے اسے چپ کروا دیا۔ امجد شعیب

وزیراعظم نے بھارت کال کرنے سے پہلے فوج سے مشورہ نہیں کیا اور وہ پاکستان کی پٹھان کوٹ حملے کی انکوئری سے بھی مطمئن نہیں تھے۔ امجد شعیب

بھارت پاکستان سے کچھ لوگوں کو لے گیا ہوا ہے اور وہ انہیں مختلف واعات میں استعمال کرتا ہے۔ امجد شعیب

بھارت گجرات میں ایک واقعہ کروانے جا رہا تھا لیکن پاکستان کی ایجنسی نے دس میں سے چھ لوگوں کے نام بتا دئیے کہ جن کو استعمال کیا جانا تھا۔ امجد شعیب

اگر ہمارے ادارے بھارت میں دہشت گردی کروا رہے ہوتے تو وہ بھارت کو دہشت گردوں کے نام کیوں بتاتے۔ امجد شعیب

اڑی کے واقع میں بھی ایسا ہی ہوا ہے میں جو بات بتا رہا ہوں میں اس کی پوری زمہ داری لیتا ہوں۔ امجد شعیب

جنرل امجد شعیب کی باتوں سے یہ تاثر ملتا ہے کہ وزیراعظم پاکستان سے زیادہ بھارت کے اداروں پر اعتماد کرتے ہیں۔ محمد زبیر

جنرل امجد شعیب کے الزمات کی نوعیت اے آر وائی کے الزامات والی ہے۔ محمد شعیب

حاضر جرنیلوں کو وزیراعظم کے ساتھ کوئی مسئلہ نہیں امجد شعیب اپنی زاتی رائے دے رہے ہیں۔ محمد زبیر

ابھی بھی نارتھ وزیرستان اور طالبان جیسے بہت سے چیلنجز ہیں جن پر کام کرنا باقی ہے۔ زاہد حسین

جنرل راحیل شریف نے بہت اچھا کام کیا ہے لیکن ابھی آدھا کام ہوا ہے آدھا باقی ہے۔ زاہد حسین

سینئیر جرنیلوں میں سے جو بھی نیا آرمی چیف بنے گا اس میں اور باقی میں انیس بیس کا ہی فرق ہو گا۔ زاہد حسین

پا سر زمین پارٹی نے خود کو مکمل طور پر ایم کیو ایم سے علحیدہ کر کے بغیر کسی نسلی امتیاز کے اپنی سیاست کو شروع کیا ہے۔ انیس ایڈووکیٹ

فاروق ستار نے خود کو ایم کیو ایم سے علحیدہ کیا لیکن میں یقین کے ساتھ کہتا ہوں کہ وہ اب بھی براہ راست الطاف حسین کے ساتھ رابطے میں ہیں۔ انیس ایڈووکیٹ

تمام سینیر جرنیلوں میں انیس بیس کا ہی فرق ہے اس لئیے جو سب سے سینئیر ہے اسی کو آرمی چیف مقرر کیا جانا چاہئیے۔ امجد شعیب

وزیراعظم اگر آرمی چیف سے مشاورت کریں گے تو وہ ان کو نئے آرمی چیف کے بارے میں زاتی طور بھی بہت کچھ بتایں گے۔ امجد شعیب

پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ ن کی حکومت دونوں نے ہمیشہ کوشش کی کہ ایسا آرمی چیف بنایا جائے جو ان کے ساتھ اچھا ہو۔ قمر زمان کائرہ

کئی بار بہت نیچے کے نمبر کے جنرل کو آرمی چیف بنایا گیا لیکن یہ فیصلہ درست ثابت نہیں ہوا۔ کائرہ

حکومت کو آرمی چیف لگانے کا اختیار بھی ادارے کو دے دینا چاہئے بجائے اس کے کہ وزیراعظم اپنی مرضی مسلط کریں۔ کائرہ

صرف سنیارٹی کی بنیاد پر نیا آرمی چیف نہیں لگایا جا سکتا بعض دفعہ انجنیرنگ کور کا جنرل سب سے سینیر ہوتا ہے لیکن اسے آرمی چیف نہیں لگایا جا سکتا۔ امجد شعیب

جنرل جہانگیر کرامت کے دور میں یہ تجویز دی گئی کہ نئے آرمی چیف کی تقرری کے فیصلے کو ادارے کو دے دینا چاہئیے۔ امجد شعیب

جنرل علی قلی خان نے آرمی چیف کی تقرری کا اختیار ادارے کو دینے کی تجویز کی بہت زیادہ مخالفت کی تھی۔ امجد شعیب

حکومت کو اس بات کا علم ہو گیا اور ایک وزیر نے مجھ سے پوچھا کہ آپ نے ادارے کو آرمی چیف لگانے کا اختیار دینے کی تجویز پیش کی ہے میں نے کہا کہ نہیں ۔ امجد شعیب

جنرل راحیل شریف کو جب آرمی چیف لگایا گیا تو کوئی ان کے بارے میں کچھ نہیں جانتا تھا لیکن وہ بہت ہی اچے جنرل ثابت ہوئے۔ کائرہ

About NadeemMalikLive

NADEEM MALIK LIVE IS A FLAGSHIP CURRENT AFFAIRS PROGRAMME OF SAMAA.TV

Comments are closed.

%d bloggers like this: