RSS Feed

30 March, 2017 15:59

Posted on

NADEEM MALIK LIVE

www.samaa.tv/videos/NadeemMalik

30-MARCH-2017

سپریم کورٹ قانون کی عدالت ہے انہوں نے قانون کے مطابق ہی فیصلہ کرنا ہے۔ رانا ثنا اللہ کی ندیم ملک لائیو میں گفتگو

عدالت میں اگر وکیلوں کے ریمارکس اور ججوں کے تبصروں کو فیصلہ نہ سمجھا جائے عدالتوں میں بہت سی باتیں ہوتی رہتی ہیں۔ رانا ثنا اللہ

نواز شریف کا پاناما کیس میں براہ راست نام نہیں ہے۔ رانا ثنا اللہ

اعتزاز احسن کے علاوہ اور بھی بہت سے لوگ ہیں جو کہتے ہیں کہ عدالت سے کبھی نواز شریف کے خلاف فیصلہ نہیں آیا۔ سعید غنی

پیپلز پارٹی کے خلاف کیس بنتا تھا یا نہیں لیکن ان کے خلاف فیصلے آتے رہے ہیں۔ سعید غنی

میں نہیں سمجھتا کہ عدالت نواز شریف کے خلاف یوسف رضا گیلانی کی طرح کا کوئی سخت فیصلہ دے گی۔سعید غنی

ہمیں ججوں نے کہا تھا کہ ثبوت دینے کا بار وزیراعظم پر ہو گا کہ انہوں نے دولت کہاں سے حاصل کی۔ عارف علوی
یہ بات واضع ہے کہ پاکستان کا کوئی ادارہ نواز شریف کے خلاف تحقیقات نہیں کرے گا۔ عارف علوی

قانون کے مطابق وہ فیصلہ ہوتا ہے جو انصاف کے مطابق ہوتا ہے۔ عارف علوی

نیوز لیکس پر کمشن بن چکا ہے وہ فیصلہ کرے گا کہ سکیورٹی بریچ ہوا یا نہیں اور کہ کس کا کیا قصور ہے۔رانا ثنا اللہ

نیوز لیکس میں سکیورٹی بریچ ہوئی یا نہیں لیکن اس کی خبر لیک کرنا درست بات نہیں تھا۔ سعید غنی

ڈان لیکس میں جو کچھ بھی کہا گیا اس کو بھارت اور امریکہ نے استعمال کیا یہ بہت بڑا سکیورٹی بریچ تھا۔ عارف علوی

کرپٹ حکمران ہمیشہ اپنے ملک کے مفاد کو قربان کرتے ہیں جہاں کھڑا ہونا چاہئیے یہ نہیں کھڑے ہوتے۔ عارف علوی

کوئی میٹنگ ہو رہی ہو اور کوئی اس کی تفصیلات کو لیک کرے تو یہ بہت غیر زمہ داری کی بات ہے سکیورٹی بریچ نہیں ہے۔ رانا ثنا اللہ

نچلی عدالت سے سزا ہو اور ہائی کورٹ بری کر دے تو خاص دلیل دینا پڑتی ہے اور عدالت نے کاظمی صاحب کو بری کیا ہے۔ سعید غنی

ڈاکٹر عاصم کو انیس مہینے کے بعد ضمانت دی ہم کہتے رہے ان کا کیس سنا جائے اب کہا جا رہا ہے کہ ڈیل ہو گئی ہے۔ سعید غنی

پاکستان کی بد نصیبی ہے کہ جو کیس جس طرح دفن ہو سکتا ہے کر دیا جاتا ہے۔ عارف علوی

پاکستان میں بڑے لوگوں کے خلاف مقدمات کو قانون کی باریکیوں میں الجھا دیا جاتا ہے۔ عارف علوی

ہم پہلے بندے کو پکڑتے ہیں پھر اس کا میڈیا ٹرائیل کرتے ہیں اور اس کے بعد ثبوت اکٹھے کرتے ہیں۔ رانا ثنا اللہ

ڈاکٹر عاصم کے خلاف کوئی ثبوت نہیں ہیں اگر اس نے دولت بنائی ہوتی تو وہ آج دنیا کا امیر ترین آدمی ہوتا۔ رانا ثنا اللہ

ڈاکٹر عاصم کے خلاف کوئی ثبوت تھے تو پراسیکیوشن کو سامنے لانے چاہئیے تھے۔ رانا ثنااللہ

http://naeemmalik.wordpress.com/

Advertisements

About NadeemMalikLive

NADEEM MALIK LIVE IS A FLAGSHIP CURRENT AFFAIRS PROGRAMME OF SAMAA.TV

Comments are closed.

%d bloggers like this: